سری لنکا میں چہرے چھپانے پر پابندی عائد

EjazNews

سری لنکن صدر متھری پالا سری سینا نے گزشتہ دنوں ہونے والے بم دھماکوں کے بعد ہنگامی قانون کے تحت سری لنکا میں نقاپ پر پابندی عائد کر دی ہے۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق سری لنکن صدر کے دفتر سے جاری بیانیہ کے مطابق ہنگامی قانون کے تحت عوامی مقامات پر کسی بھی طرح کے نقاب یا منہ چھپانے پر پابندی لگا دی گئی ہے۔اس پابندی کا مقصد قومی سلامتی کو یقینی بنانا ہے اور کسی کو بھی اپنا چہرہ چھپا کر اپنی شناخت کو مشکل نہیں بنانا چاہیے۔
غیر ملکی میڈیا کے مطابق سری لنکا کی کل آبادی 2کروڑ ہے جبکہ ان میں سے صرف 10فیصد مسلمان ہیں ۔
واضح رہے سری لنکا میں ایسٹر کے موقع پر 8بم دھماکے ہوئے تھے جس سے جزیرہ نما سری لنکا لرز کر رہ گیا تھا۔ ان دھماکوں کے بعد مختلف قیاس آرائیاں جاری ہیں۔ اس میں بھارتی شہریوں کے ملوث ہونے کے بھی شواہد مل رہے ہیں جبکہ میڈیا کے ایک حصے نے دعویٰ کیا تھا کہ اس کی ذمہ داری داعش نے قبول کر لی ہے۔ ابھی یہ مکمل طور پر واضح نہیں ہو سکا کہ آیا اس چھوٹے سے ملک میں دھماکے کرنے کا کسی کا کیا مقصد ہو سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  بابری مسجد کوشہید کرنے والے تمام دہشت گرد رہا