سری لنکا میں ہلاکتوں کی تعداد 310ہو گئی

EjazNews

ایسٹر کے مذہبی تہوار کے موقع پر سری لنکا دھماکوں سے گونج اٹھا۔ کولمبو میں جیسے کہرام مچ گیا ہو۔ 3گر جا گھروں اور 4ہوٹلوں میں دھماکے ہوئے جن میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 310 سے زائد ہو چکی ہے اور 5سو سے زائد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔
غیر ملکی میڈیا کی رپورٹس کے مطابق ان بلاسٹوں میں خودکش حملے بھی تھے۔ پولیس نے کچھ لوگوں پر شبہ ظاہر کرتے ہوئے انہیں گرفتار بھی کیا ہے۔دھماکوں کے بعد کولمبومیں کرفیو نافذ کر دیا گیا ہے اور فوج سڑکوں پر گشت کر رہی ہے۔ سری لنکا میں سوشل میڈیا کو بند کر دیاگیا ہے۔ وزیراعظم نے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ افواہوں پر کان نہ دھریں ۔
یہ دھماکے اس وقت کیے گئے جب لوگ ایسٹر کے تہوار پر عبادات میں مصروف تھے اور جن ہوٹلوں میں دھماکے کیے گئے ان کے بارے میں کہا جارہا ہے کہ وہ فارنر اور بزنس میٹنگز کیلئے مشہور تھے۔
ان دھماکوں کی پوری دنیا میں مذمت کی گئی ہے۔
سری لنکن وزیراعظم نے دھماکوں کی مذمت کرتے ہوئے اسے بزدلانہ اقدام قرار دیا ہےان کا کہنا تھا کہ حکومت صورتحال پر قابو پانے کے لیے اقدامات کر ہی ہے، عوام مشکل وقت میںمتحد رہیں افواہوں پر کان نہ دھریں۔
پاکستان نے بھی شدید الفاظ میں ان دھماکوں کی مذمت کی ہے۔ پوری دنیا اس سوگ میں مبتلا ہے کہ اس چھوٹے سے ملک کے ساتھ کسی کی کیا دشمنی ہو سکتی ہے۔
پیرس کے گرجا گھروں میں ہلاک ہونے والوں کے لیے دعائیہ تقریبات کا اہتمام کیا گیا۔مشہور زمانہ ایفل ٹاور کی لائٹس آف کر کے اظہار یکجہتی کا مظایرہ کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں:  انڈیا اور امریکہ سول اسلحہ کی دوڑ میں ساری دنیا سے آگے نکل گئے

امریکہ نے سری لنکا کا متنبہ کیا ہے کہ وہاں پر مزید دھماکے ہو سکتے ہیں۔