پاکستان کا ایران سے دہشت گردوں کیخلاف سخت کارروائی کا مطالبہ

EjazNews

گزشتہ روز بلوچستان میں بسوں پر سفر کرنے والے افراد کو باقاعدہ بسوں سے نیچے اتار کر شناختی کارڈ چیک کر کے شہید کیا گیا تھا۔ان کو شہید کرنے کے بعد دہشت گرد ایران فرار ہو گئے۔ پاکستان نے ایران کے ساتھ خفیہ معلومات کا تبادلہ بھی کیااور وزیر خارجہ نے ایران سے اس بارے میں احتجاج بھی کیا کہ ایران اپنے دہشت گردوں کو قابو میں رکھے۔ پاکستان کی فارن منسٹری کی جانب سے اب باقاعدہ تحریر طور پر ایران سے احتجاج کیا گیا ۔پاکستان نے ایران سے دہشت گردوں کیخلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کر دیا ۔ منسٹر آف فارن افیئر نے پاکستان میں موجودایرانی ایمبیسی کو تحریر طور پر کہا ہے کہ وہ پاکستان میں دہشت گردی کی کارروائی کرنے والے دہشت گردوں کیخلاف کارروائی کرے۔ ان کے ساتھ خفیہ معلومات کا بھی تبادلہ کیا گیا ہے۔اس مراسلے میں پاکستان نے ایران سے کہا ہے کہ وہ ایران کی جانب سے کیے جانے والے اقدامات کا انتظار کر رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  ہمارا مقابلہ ایک ایسی سیاسی قیادت سے ہے جو کبھی سیاسی جدوجہد سے نہیں گزری:وزیراعظم

[the_ad id=”4237″]
یاد رہے گزشتہ روز ہونے والی دہشت گردی میں مسافروں کو بسوں سے اتار کر شناختی کارڈ چیک کر کے شہید کیا گیا ہے۔ ان میں زیادہ تر کا تعلق پاکستانی فوج سے تھا۔ بلوچ دہشت گرد تنظیم نے اس کی ذمہ داری بھی قبول کی تھی۔
اس بات کو بھی ذہن نشین رہنا چاہیے کہ آج وزیراعظم عمران خان ایران میں موجود ہیں اور وہ ایران کے صدر حسن روحانی سے ملاقات کریں گے امید ہے اس ملاقات میں بھی اس نقطہ کواٹھایا جائے گا۔