Good friday

ایسٹر ہوتا کیا ہے

EjazNews

مسیحی نقطہ نظر سے ایسٹراس لئے زیادہ مقدس ہے کہ اس دن حضرت عیسیٰؑ صلیبی موت کے بعدتیسرے دن دوبارہ مردوں میں سے زندہ جی اٹھے ۔چنانچہ اسی مناسبت سے مسیحی ایسٹر کا تہوار بڑے جوش جذبے اور اہتمام کے ساتھ مناتے ہیں۔ایسٹر کو عیسائیوں کے دوسرے سب سے بڑے تہوار کی حیثیت حاصل ہے جو کہ ان کے مطابق حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے پھر سے جی اٹھنے کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ مدتوں اس کی تاریخ میں اختلاف رہا۔325ءمیں رومی بادشاہ قسطنطین اول نے ایشیائے کوچک کے مقام پر ازنک میں عیسائی علماءکی ایک کونسل بلائی جسے نائسیا کی پہلی کونسل کہتے ہیں۔ لیکن یہ کونسل بھی ، مشرقی اور مغربی کیلنڈروں میں اختلاف کے باعث کوئی متفقہ تاریخ مقرر نہ کر سکی۔
ایسٹر کومسیحی روزوں کے ایام کے بعد منایا جانا والا تہوار ہے۔ اس سے قبل 40روزے رکھے جاتے ہیں۔ ایسٹر کو عید پاشکا یا عید قیامت المسیح بھی کہا جاتا ہے۔ مسیحی برادری اتوار کو اپنا سب سے بڑا مذہبی تہوار ایسٹر منارہی ہے۔پاکستانی مسیح بھی دنیا بھر کی مسیحیوں کی طرح یہ دن پوری مذہبی عقیدت اور جوش و جذبہ کے ساتھ مناتے ہیں۔ پورے ملک میں چرچوں کو سجایاجاتا ہے اور عبادتوں کا اہتمام کیا جاتا ہے۔
یاد رہے گزشتہ روز عیسائی برادری نے گڈ فرائیڈے کی تقریبات بھی منعقد کیں۔ پاکستان سمیت دنیا بھر میں مسیحی برادری نے گڈ فرائیڈے مذہبی عقید ت و احترام سے منایا۔اس سلسلے میں ملک بھر کے گرجا گھروں میں خصوصی دعائیہ تقریبات کا اہتمام کیا گیا ہے۔ پولیس و انتظامیہ کی جانب سے سخت ترین حفاظتی اقدامات کیے گئے تھے۔
مسیحی عقائد کے مطابق عیسیٰ علیہ السلام کی صلیبی موت کی یاد کو گڈ فرائیڈے کے نام سے جانا جاتا ہے اس روز خصوصی دعائیہ تقریبات کا اہتمام کیا جاتا ہے جن کا مقصد دراصل کرائسٹ کے ان دکھوں کو یاد کرنا ہے جوانہوں نے اپنی صلیب پر سہے اور ان کے منہ سے ادا کیے گئے سات کلمات کی اہمیت کو سمجھنا ہے۔ مسیحی گڈ فرائیڈے کو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی لازوال قربانیوں سے تعبیر کرتے ہوئے ان کے ساتھ عقیدت و احترام کا اظہار کرتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  حافظ سعید کی گرفتاری میرے 2سالہ دباﺅ کا نتیجہ ہے: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ