baby child

جانئے بچے کی پیدائش کے بعد حفاظت کے ابتدائی مراحل

EjazNews

پیدائش کے فوراً بعد بچے کو موسم کے مطابق حفاظت میں لے لینا چاہئے کیونکہ یہ ایک پھول ہے جو معمولی سے نامساعد حالات سے مرجھا سکتا ہے آنکھوں میں پنسلین یا کلورو ماکسٹن کے قطرے ڈال دینے چاہئیں اور دو تین دن تک بی۔ سی۔ جی کا ٹیکہ مستند ڈاکٹر کی زیر نگرانی لگوا دینا چاہئے ۔ اوائل عمر میں انسانی جسم کا قدرتی حفاظتی نظام زیادہ مضبوط نہیں ہوتا لہٰذا اگر ڈاکٹر دایہ ماں یا کوئی اور شخص جو ٹی ۔ بی کا مریض ہو تو بچے کو ٹی۔ بی کے حملے کا خطرہ ہوگا۔
خوراک
پہلے 24گھنٹے میں سادہ ابلا ہوا پانی اور شہد چوسنے کےلئے گلاب عرق یا چہار عرق بھی استعمال کیا جاسکتا ہے پیالا چمچہ و دیگر مذکورہ مطلوبہ چیزیں جراثیموں سے پاک رکھنے کے لئے صفائی کا حد درجہ اہم خیال رکھا جائے ماں کے پستان نیم گرم پانی سے دھو کر دھو دئیے جائیں پہلا دودھ ضائع نہ کیا جائے ۔ جدید تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ پہلا دودھ بچے کے معدے کے لئے بہترین ہے اگر بچے کو قبضہ ہو جائے یا دست لگ جائیں تو ڈاکٹر سے رجوع کریں۔
ناف سے متعلقہ مسائل
ایک ہفتے کے اندراندر ناڑو سوکھ کر خود بخود اتر جاتا ہے مشاہدے میںآیا ہے کہ کئی بچوں کیناف میں پیپ پڑ جاتی ہے یہ ایک خطرناک کیس بن سکتا ہے کیونکہ ناف کا تعلق بلا واسطہ پیٹ کے اندرونی حصوں سے ہوتا ہے لہٰذا بیماری (Infection) پیٹ کے اندرونی حصوں کو متاثر کر سکتی ہے اور بچے کی موت کا باعث بن سکتی ہے ایسے حالات میں بغیر حیل و حجت مستند ڈاکٹر کے مشورے سے بچنے کا علاج کروانا چاہیے
ماں کی خوراک
ماں جو چیز بھی چاہے کھا سکتی ہے اسے زیادہ پرہیز نہیں کرنا چاہئے کیونکہ بچے کو ابتداءسے ہی پرہیز والا دودھ دیا جائے گا تو بعد میں ماں پرہیز نہیں کرے گی اس وقت بچے کو تکلیف کا سامنا کرنا پڑے گا ماں کا پہلا دودھ بچے کے معدے میں وہ صلاحیت پیدا کر دے گا کہ ماں کے دودھ کو ہر طرح سے ہضم کر سکے اس لئے جیسے کہ ہمارے ہاں بعض خاندانوں میں رواج ہے کہ بچے کو تین دن دودھ نہیں دیا جاتا درست ثابت نہیں ہوسکا۔
مالش کی اہمیت
طبی تحقیق سے ثابت ہو چکا ہے کہ جن بچوں کو مائیں مالش کرتی ہیں ان کے پٹھے اور دووران خون دوسرے ہم عمر بچوں سے بہتر ہوتا ہے جب ایسا ہوگا تو یقینا بچے کا ذہن بھی بہتر کام کرے گا بچے کو موسم کے ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے عام سرسوں کے تیل سے مالش کر کے نیم گرم پانی سے نہلا کر تولئے میں لپیٹ لینا چاہئے جدید تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ نیچے ایسے سنٹر موجود ہیں جب بچے کو مالش کی جاتی ہے تو دباﺅ سے یہ سینٹر ارتعاش محسو س کرتے ہیں اور جسم میں تھکاوٹ و درد کے احساس کو کم کرنے کے علاوہ توانائی میں بھی اس کی تصدیق کرتا ہے بچے کا وزن بھی بڑھ جاتا ہے۔
ماں کا دودھ
دنیا کے تمام ڈاکٹر حضرات و حکماءاس بات پر متفق ہیں کہ ماں کا دودھ ہی بچے کی صحت کے لئے بہترین غذا ہے فیڈر کا استعمال بچے کی جسمانی و نفسیاتی صحت کے لئے خطرناک ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  عورتوں میں ہائی بلڈ پریشر کے نقصانات