بلاول بھٹو زرداری

بلاول بھٹو زرداری کی کوئٹہ میں میڈیا سے گفتگو

EjazNews

بلاول بھٹو زداری آج ہزار گنجی خودکش حملے میں جاں بحق ہونے والے ہزارہ برداری کے لواحقین سے اظہار افسوس کے لیے کوئٹہ پہنچے ۔جہاں پر انہوں نے میڈیا سے گفتگو کی۔گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ ہم نے بہت ظلم اور مشکلات دیکھی ہیں میرے خاندان نے دیکھا، میرے نانا ، مامو اور والدہ کوشہید کیا گیا۔ بلاول کا کہنا تھا کہ ہمارے ہزاروں کارکنوں کو بھی شہید کیا گیا، ہزارہ کمیونٹی میں کوئی ایسا نہ ہوگا جس کا کوئی شہید نہ ہوا ہو ۔ اتنی لاشیں گرنے کے باوجود ہماری حکومت فیصلہ نہ لے سکی کہ وہ دہشتگردوں کے ساتھ ہے یا شہدا کےساتھ، حکومت کو فیصلہ کرنا ہوگا، کب تک دوغلی پالیسی جاری رہےگی۔انہوں نے کہا کہ کوئی انتہاپسندی کے خلاف اکیلا نہیں لڑسکتا مگر ہمیں اپنے مستقبل کے لیے فیصلہ کرنا پڑے گا، ہمیں اس انتہا پسند ذہنیت کےخلاف لڑنا ہے، ہم جب انصاف مانگتے ہیں تو ملک دشمن قرار دیا جاتا ہے، کالعدم تنظیموں کے خلاف بات کرتا ہوں تو ملک دشمن کہا جاتا ہے، ہم ملک دشمن ہیں یا وہ کالعدم تنظیمیں جو ہمارے بچوں کو قتل کررہی ہیں؟چیئرمین پی پی کا کہنا تھا کہ ملک کی تمام قوتوں کو پیغام دیتا ہوں کہ قومی دھارے میں لانا ہے تو دہشت گردی کے متاثرین کو لائیں کالعدم تنظیموں کو نہیں۔بلاول بھٹو زرداری نے مزید کہا کہ میں بھی شہید کا بیٹا ہوں ملک کو انتہاپسندوں سے پاک کرنے تک چین سے نہیں بیٹھوں گا، پوری سیاسی زندگی اس کام کے لیے ہوگی کہ اپنے ملک کو انتہاپسندوں سے پاک کروں تاکہ ہم امن کے ساتھ اس ملک میں زندگی گزار سکیں۔ان کا کہنا تھا کہ ہمیں مل کر دہشتگردوں کا مقابلہ کرنا ہوگا اور مظلوم عوام کو تحفظ دینا پڑے گا۔

یہ بھی پڑھیں:  سندھ میں میٹرک کے امتحان 15جون سے شروع ہوں گے
بلاول بھٹو زرداری نے اپنے ٹویٹر اکائونٹ پر یہ ویڈیو شیئر کی