بلاول بھٹو زرداری

حکمرانوں سے ملک سنبھالا نہیں جارہا :بلاول بھٹو زرداری

EjazNews

گھوٹکی میں خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کہتے ہیں تاریخ کی بدترین دھاندلی کے باوجود خان کو برتری نہیں دے سکے جب حکومت بنائی تو مانگی تانگی۔ ایک سیاسی حکومت کو بٹھانے کےباوجود ہم اس حکومت کو وقت دینا چاہتے تھے۔ پاکستان پیپلز پارٹی اس سسٹم کو آگے بڑھانا چاہتی تھی۔ ہم چاہتے تھے حکومت کو کام کرنے کا وقت ملے ، انہوں نے جو وعدے عوام سے کیے پورے ہوں ہم نے دیکھا سب نے دیکھا تبدیلی سرکار کی تو کوئی پالیسی نہیں ہے نہ ان کی داخلی پالیسی ہے ۔ ان کی خارجہ پالیسی بھیک مانگنے کی ہے۔ ان کی داخلہ پالیسی سیاسی انتقال کی ہے۔ ان سے ملک سنبھالا نہیں جارہا ۔یہ نیب گردی کے ذریعے ہمیں جھکانا چاہتے ہیں یہ نیب گردی کے ذریعے لوگوں کو بیوقوف بنانا چاہتے ہیں اپنے گناہ چھپانا چاہتے ہیں۔ ہم احتساب کے خلاف نہیں ہیں ،میں یہ بھی نہیں کہتا کہ میرا احتساب نہ کرو میں تو کہتا ہوں سب کا احتساب کرو احتساب کا ایسا نظام ہو جو سب کا صاف اورشفاف احتساب ہو جس احتساب سے انتقام کی بو نہ آتی ہو ۔ یہ کیسا احتساب ہے کہ نیب بی آر ٹی پشاور پر ہاتھ نہیں ڈالتا۔ یہ کیسا انصاف ہے ،سپیکر سندھ اسمبلی کو گرفتار کیا جاتا ہے اور علیمہ باجی سے اس کے بیرون ملک جائیداد کا نہیں پوچھا جاتا۔ سندھ کے وزیر اعلیٰ کو تو بلا لیا جاتا ہے لیکن خیبرپختونخوا کے وزیراعلیٰ کو نوٹس بھی نہیں دیا جاتا۔ یہ آمروں کے پلے ہوئے ہمیں جھکا نہیں سکتے ، ہمیں ڈرا نہیں سکتے۔ ہم نے ان کا بھی مقابلہ کیا تھا تمہارا بھی مقابلہ کریں گے ۔ ان کا کہنا تھا گھوٹکی کے باسیوخان کے گرد و نواح کے لوگوں کو پہچانو، یہ وہ لوگ ہیں جوشہید ذوالفقار علی بھٹو کے دئیے ہوئے متفقہ آئین کو ختم کر نا چاہتے ہیں، ان کو آپ کے وسائل چاہیے ۔کیونکہ یہ چھیننا جانتے ہیں دینا نہیں۔ یہ لوگ یہاں کی ترقی نہیں چاہتے اس لیے تو بے نامی وزیراعظم نے یہاں آکر بھی کوئی اعلان نہیں کیا۔ وفاق نے سندھ کے 144ارب روپے پر ڈاکہ ڈالا ہوا ہے یہ آپ کے پیسے ہیں آپ کے خون پسینے کی کمائی کے پیسے ہیں یہ آپ کا حق ہیں جو آپ سے چھینا گیا ہے ان پیسوں سے ہم کیا کچھ نہیں کر سکتے تھے۔

یہ بھی پڑھیں:  کراچی کنگز کی فتح کے ساتھ پلے آف تک رسائی