shah mahmood

بھارت پلوامہ جیسی ایک اور کارروائی کرنے کا منصوبہ بنارہا ہے:وزیر خارجہ

EjazNews

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ملتان میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے اس بات کا اظہار کیا ہے کہ بھارت 16سے20اپریل کے دوران پلوامہ کی طرز پر کوئی کارروائی کرکے پاکستان پر سفارتی دبائو ڈالنے کی کوشش کرےگا۔ وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ 14فرری کو پلوامہ کا واقع رونما ہوا ، پلوامہ واقع کے بعد بھارت کا رویہ سب نے دیکھا۔ ان کا کہنا تھا بھارت پاکستان کو مورد الزام ٹھہرانے کی کوشش کی، اور کشیدگی کو پوری طرح ہوا دی۔ اس کے برعکس پاکستان کشیدگی کو کم کرنے کی کوششیں کرتا رہا تاکہ خطے میں امن و استحکام برقرار رہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ عالمی برادری بھارت کے غیر ذمہ دارانہ رویے کا نوٹس لے۔ اور بھارت کو تنبیہ کر ے کہ وہ اس راستے پر نہ چلے۔ وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ مستند انٹیلی جنس رپورٹس ہیں کہ بھارت ایک نیا منصوبہ تیار کر رہا ہے ۔ جس کو وہ 16سے20اپریل تک عمل میں لا سکتا ہے۔ اور مقبوضہ کشمیر میں ہی پلوامہ جیسا ایک اور واقعہ دوہرایا جاسکتا ہے۔ اس کا مقصد سفارتی سطح پر پاکستان پر دبائوڈالنا ہے۔ بھارت کی جانب سے خطرناک کھیل کھیلا ج ارہا ہے۔ جو انکشاف میں نے کیا ہے تو اس کو ماضی سے جوڑیں تو احساس ہوگا کہ مودی سرکار نے سیاسی مقاصد کیلئے الیکشن میں خطے کے امن کو دائو پر لگایا ہے ۔
وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ جنگ کے بادل ابھی بھی پوری طرح چھٹے نہیں، مودی کہتے ہیں میں نے تو فوج کو فری ہینڈ دے رکھا ہے۔ نریندر مودی کی یہ قابل تشویش اور قابل غور بات ہے۔ ایسی باتیں جنگ کی جانب دھکیلنے کے مترادف ہیں۔
وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی میں شدت آئی ہے، مقبوضہ کشمیر میں جبر اور تشدد بڑھ گیا ہے اور اگر بھارت کے اس عمل کو نظر انداز کیا گیا تو جنوبی ایشیا کا استحکام متاثر ہوگا۔ پاکستان پہلے بھی کشمیر کی سیاسی جدوجہد کو سراہتا ہے اور آج بھی سراہتا ہے۔ پاکستان ہمیشہ سے کشمیریوں کا ساتھ دیتا رہاہے اور دیتا رہے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ کشمیر کے ساتھ پر کسی کو حیرت نہیں ہونی چاہیے۔
وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ عالمی میڈیا نے بھارت پروپیگنڈے کو بے نقاب کر کے رکھ دیا۔

یہ بھی پڑھیں:  اٹک میں دوگاڑیوں کے تصادم میں چارافراد جاں بحق