muhammad ali

محمدعلی کو مداحوں سے بچھڑے 13برس ہوگئے

EjazNews

محمد علی 10نومبر 1931کو ہندوستان کے شہر رامپور میں مولانا سید مرشد علی کے ہاں پیدا ہوئے۔ مذہبی گھرانے کے اس چشم و چراغ نے ابتدائی تعلیم ملت ہائی سکول سے حاصل کی۔گورنمنٹ ایمرسن کالج ملتان سے اپنی ایف اے کی ڈگری مکمل کی اور اس کے بعدحیدر آباد سے بی اے کیا۔اپنی تعلیم کے بعد وہ ریڈیو پاکستان حیدر آباد سے منسلک ہو گئے۔فلمساز فضل احمد کریم فضلی نے ان کی صلاحیتوں کو پہچان کر اپنی فلم چراغ جلتا رہا میں بطور ہیرو کاسٹ کیا اور اس کے بعد انہوں نے کبھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔ چار دہائیوں تک سلور سکرین پرحکمرانی کر نے والے محمد علی نے کروڑوں دلوں پر راج کیا۔ شہنشاہ جذباب کہلائے جانے والے محمد علی نے اپنی لازوال اداکاری اور آواز کے بہترین استعمال سے فلمی دنیا کو بہت جلد ایک ستارے سے روشناس کرادیااور ایشیاءکے 25بہترین اداکاروں میں سے ایک اداکار کہلائے۔
محمد علی نے 4سوسے زائد فلموں میں اداکاری کے جوہر دکھائے۔ منفرد انداز، آواز کے اتار چڑھاﺅ پر مکمل دسترس اور حقیقت سے قریب تر اداکاری نے محمد علی کو شہرت کی بلندیوں پر پہنچا دیا۔
محمد علی کی مشہور فلموں میں جاگ اٹھا انسان،دال میں کچھ کالا ہے، خاموش رہو، غدار، سفید خون ،شرارت، ٹیپو سلطان ،جیسے جانتے نہیں ، آگ، گھرانہ، میرا گھر میری جنت، بہاریں پھر بھی آئیں گی، محبت ، تم ملے پیار ملا اور دیگر بہت سی فلمیں شامل ہیں۔
محمد علی نے جس اداکارہ کے ساتھ بھی کام کیا ان کی جوڑی اس کے ساتھ خوب سجی، محمد علی کا شمار ورسٹائل اداکاروں میں ہوتا تھا۔ محمد علی فلمسٹاز زیبا سے شادی کی جن سے ان کی ملاقات ان کی پہلی فلم کے موقع پر ہوئی تھی۔ اس جوڑی نے کامیاب فلمی جوڑی کے طورپر زندگی گزاری۔انہوںنے کئی کریکٹر رول اور منفی رول بھی بڑی کامیابی سے پر فارم کئے۔ 19مارچ2006ءکو محمد علی لاہور میں وفات پا گئے محمد علی نے پاکستان کی فلم انڈسٹری پر اپنی اداکاری کے گہرے نقوش چھوڑے۔

یہ بھی پڑھیں:  ستارہ۔ نیٹ فلیکس پر ریلیز ہونے والی پہلی پاکستانی اینی میٹڈ فلم