عمران خان

شہروں کو پھیلنے کی بجائے اوپر کی طرف لے کر جائیں گے: وزیراعظم عمران خان

EjazNews

وزیراعظم عمران خان نے آج ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ کم لاگتی مکانات کی تعمیرغربت کے خاتمے کے پروگرام کا حصہ ہے، پاکستان میں آبادی کا بڑا حصہ اپنا گھر نہیں خرید سکتا ، پالیسیاں اگر تبدیل نہیں کرتے تو تھوڑا سا طبقہ ہی اچھے گھروں میں رہ سکتا تھا۔ ہم 5سال میں 50لاکھ گھر بنا کر دیں گے۔وزیراعظم کا کہنا تھا یہ فلاحی ریاست کا آغاز ہے جلد لوگوں کو اپنا گھر ملے گا۔وزیراعظم کا مزید کہناتھا کہ ہائوسنگ سکیمز کیلئے پنجاب کے 12شہروں کا انتخاب کر لیا گیا ہے ان میں سے 3کا افتتاح بھی ہوگیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ان ہائوسنگ سکیمز کا بنیادی مقصد رقم سے محروم افراد کو مکانات کی فراہمی ہے۔
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ بینکوں کو قرضے دینے کیلئے مراعات دی گئی ہیں۔کسانوں کے لئے قرضوں کی فراہمی کا انتظام کیا گیا ہے، نئی پالیسی کے تحت چھوٹے کسانوں کو آسان نرخوں پر قرضہ ملے گا۔
انہوں نے مزید کہا کہ شہرو ں میں موجود کچی آبادیوں کیلئے آج تک کسی نے نہیں سوچا ، کچی آبادیوں میں رہنے والوں کو فلیٹس بنا کردیں گے ، پاکستان میں کم لاگت مکانات کی تعمیر کیلئے فنانسنگ کی شرح0.2فیصد ہے شہروں کو پھیلنے کی بجائے اوپر کی طرف لے کر جائیں گے۔کچی آبادیوں میں نجی سیکٹر کے ذریعے جدید تعمیرات کرائیں گے۔ اسلام آباد کی سب سے پہلے صفائی کریں گے ، پھر اسے ماڈل شہر بنائیں ، کمرشل علاقوں میں بلند و بالا عمارتوں کی اجازت دیں گے۔
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پہلے دن سے ہماری حکومت سوچ رہی ہے کہ نچلے طبقے کو کیسے اوپر لایا جائے ۔ ان کا کہنا تھا کہ ریاست کا اب مائنڈسیٹ تبدیل ہو چکا ہے ۔ اب سوچ یہ ہے کہ غربت کیسے ختم کی جائے۔ لوگوں کو غربت سے نکالا جائے۔

یہ بھی پڑھیں:  ویڈیو میں مختلف مواقع اور موضوعات پر کی جانے والی گفتگو توڑ مروڑ کر سیاق و سباق سے ہٹ کر پیش کی گئی: جج محمد ارشد ملک

جبکہ گورنر سٹیٹ بینک کی جانب سے ایک بیان سامنے آیا جس میں ان کا کہنا تھا کہ سٹیٹ بینک پالیسی کے تحت کم لاگت گھروں کی تعمیر کے لیے قرضے جاری کرے گا۔ 30لاکھ روپے لاگت تک گھر کو کم لاگت والے گھروں میں تصور کیا جائے گا۔بینک کم لاگت والے گھروں کی تعمیر کے لیے غریب آدمی کو کل لاگت کا 90فیصد قرض دے گا ، بیوگانہ، یتیم، شہدا، خواجہ سرا اور دہشت گردی سے متاثرہ افراد کو ترجیح دی جائے گی۔