کلبھوشن کیس

بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کیس

EjazNews

پاکستانی وکلاء نے آج اپنے دلائل پیش کیے ہیں جبکہ اس سے پہلے کل بھارتی وکلاء نے دلائل دئیے تھے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق اٹارنی جنرل آف پاکستان نے کہا کہ کلبھوشن یادیو بھارتی خفیہ ایجنسی را کے لئے کام کر رہا تھا جسے بلوچستان ، خصوصاً گوادر اور کراچی میں دہشت گردی کرانے کے لیے بھیجا گیا تھا۔اسے ایران سے نہیں بلوچستان سے گرفتار کیا گیا ہے ، اس کیس سے ایران کا کوئی تعلق نہیں ہے۔پاکستانی وکلاء نے انڈین صحافیوں کے آرٹیکلز کے حوالے بھی دئیے۔
یاد رہے10اپریل 2017ء کو کلبھوشن یادیو کو جاسوسی ، کراچی اور بلوچستان میں تخریب کارروائیوں میں ملوث ہونے پر سزائے موت سنائی گئی تھی۔تاہم بھارت نے کلبھوشن یادیو کے کیس کو عالمی عدالت انصاف میں چیلنج کیا ۔بھارت کی درخواست کے بعد عالمی عدالت نے کہا تھا کہ حتمی فیصلہ آنے تک کلبھوشن کو سزائے موت نہ سنائی جائے۔

یہ بھی پڑھیں:  وزیراعظم ورلڈ گورنمنٹ سمٹ میں شرکت کیلئے دبئی پہنچ گئے