گردوں کے امراض سے بچنے کا آسان طریقہ

EjazNews

پاکستان میں گردوں کا امراض بہت زیادہ پایا جاتا ہے اور اس کی بہت سی وجوہات ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ پاکستان میں اس کا علاج بہت مہنگا ہے۔ جن لوگوں کو صحت کارڈ مل رہا ہے ہو سکتا ہے ان کی زندگی میں کچھ آسانیاں پیدا ہو جائیں ۔گردوں کے بڑھتے ہوئے مرض کی ایک وجہ سامنے یہ بھی آتی ہے کہ پاکستان میں احتیاطی تدابیر پر بہت کم عمل کیا جاتا ہے۔ ایک تحقیق کے مطابق ہرسال پاکستان میں 34ہزار لوگ گردوں کے مرض میں مبتلا ہو رہے ہیں۔ گردوں کے مریضوں پر برطانیہ کے ڈربی رائل ہسپتال نے ایک تحقیق کی ہے ۔ جس سے گردوں کے مرض سے بچا جاسکتا ہے۔ آئیے اسے پڑھتے ہیں۔
گردوں کے امراض سے بچنا اب بہت آسان ہے یہ بات برطانیہ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی، گردے ہمارے جسم میں گمنام ہیرو کی طرح ہوتے ہیں جو کچرے اور اضافی مواد کو خارج کرتے ہیں جبکہ یہ نمک، پوٹاشیم اور تیزابیت کی سطح کو بھی کنٹرول کرتے ہیں، جس سے بلڈ پریشر معمول پر رہتا ہے، جسم میں وٹامن ڈی کی مقدار بڑھتی ہے اور خون کے سرخ خلیات بھی متوازن سطح پر رہتے ہیں۔ گردوں کے امراض کافی تکلیف دہ اور جان لیوا بھی ثابت ہوسکتے ہیں تاہم دن بھر میں مناسب مقدار میںپانی کا استعمال گردوں کے امراض کے نتیجے میں موت کے خطرے کو ٹال سکتا ہے۔تحقیق کے مطابق جسم میں پانی کی شدید کمی کے نتیجے میں گردے خون میں موجود زہریلے مواد کو فلٹر کرنے سے قاصر ہوجاتے ہیں اور جمع ہونے والا فضلہ گردوں کے فیل ہونے کا باعث بن جاتا ہے، ایسے افراد کی زندگی بچنے کا انحصار گردوں کی پیوند کاری پر ہوتا ہے۔تحقیق میں بتایا گیا کہ پانی کی کمی کو دور کرنا گردوں کے امراض سے تحفظ دینے کا آسان طریقہ ہے خاص طور پر درمیانی عمر کے افراد کو اس کا خیال رکھنا چاہیے۔تحقیق میں بتایا گیا کہ اگر کسی شخص کو معمول سے کم پیشاب آرہا ہو، قے و متلی، معدے میں درد، ذہنی الجھن اور چکر وغیرہ جیسی علامات کا سامنا ہو تو یہ گردوں کے امراض کی علامات ہوسکتی ہیں۔کئی بار گردے لگ بھگ ختم ہونے والے ہوتے ہیں تو بھی علامات سامنے نہیں آتیں تو اس سے بچنے کے لیے بلڈ شوگر اور بلڈ پریشر کو کنٹرول میں رکھنا سب سے بہترین حفاظتی تدبیر ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  طبی معلومات
کیٹاگری میں : صحت