molana fazlu rehman

دھرنا ختم، اور مولانا فضل الرحمن کا پلان بی

EjazNews

مولانا فضل الرحمن کا لانگ مارچ بڑی شان و شوکت کے ساتھ اسلام آباد پہنچا تھا۔مسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی نے وہاں جلسہ بھی دیا لیکن دھرنا نہیں دیااور مولانا تنہا رہ گئے ۔ شاید مولانا فضل الرحمن اتنے دن اس لیے وہاں بیٹھے رہے کہ ان پارٹیوں سے ان کی کوئی سیٹلمنٹ ہو جائے اور یہ دھرنے میں شریک ہو جائیں لیکن ایسا نہ ہو پایا۔

اب مولانا فضل الرحمن نے دھرنا ختم کر نے کا اعلان کر دیا ہے اور ان کا کہناہے وہ جو علاقے بند کریں گے وہ شہروں سے ہٹ کر ہوں گے ۔ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا مولانا فضل الرحمن اکیلے کے پاس اتنی سٹریٹ پاور ہے کہ وہ ملک کو بند کر سکیں ۔ یہ ایک اہم سوال ہے جو جواب طلب بھی ہے۔اگر آپ اس لحاظ سے دیکھیں کہ مولانا فضل الرحمن کے پاس الیکشن میں سیٹیں کتنی ہوتی ہیں گزشتہ ادوار میں تو آپ کو کچھ اندازہ کر نا آسان ہوگا اور اگر اس سے بہتر انداز میں آپ جاننا چاہتے ہیں تو انہوں نے ملک کے جس جس کونے میں اپنے نمائندے کھڑے کیے ہوتے ہیں اگر ان کے ووٹ دیکھ لیں تو بھی آپ کو اندازہ کرنا مشکل نہیں ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں:  آصف زرداری اور بلاول نے نیب کو بیان ریکارڈ کر ادیا

اب مولانا فضل الرحمن اور چوہدری برادران کے درمیان ہونے والی ملاقاتوں کا اگر ذکر نہ کیاجائے تو غلط ہو گا کیونکہ اس دھرنے کو ختم کرانے میں ان ملاقاتوں کا بھی ایک اہم عنصر ہے۔ چوہدری برادران ٹیبل ٹاک میں ایک مہارت رکھتے ہیں اور چوہدری شجاعت کے بارے میں تو مشہور ہے کہ وہ ٹیبل ٹاک کے بادشاہ ہیں۔

حکومت کو نیا جوش و خروش مل گیا ہے کیونکہ یہ دھرنا جن مقاصد کے حصول کیلئے دیا گیا تھا وہ پورا نہیں ہو سکا اور بہت جلد ہی ختم بھی ہوگیا۔ ویسے تو اگر پچھلے کچھ ادوار کے دھرنے اور خاص کر طاہر القادری کے دھرنوں کو دیکھا جائے تو وہ بھی جو مطالبے لے کر آئے تھے ان میں سے وہ کون سے منوا کر گئے ہیں ہمارے خیال میں ایک بھی نہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  سابق امیر جماعت اسلامی سید منور حسن دنیا فانی کو چھوڑ گئے

اپنے خطاب میں ان کا کہنا تھا کہ اب دیواریں گر چکی ہیں اور ایک اور دھکا دینے کی ضرورت ہے۔مولانا فضل الرحمن کا کہنا تھا کہ آزادی مارچ پر امن رہے گا اور کسی قسم کا کوئی نقصان نہیں کیا جائے گا۔ان کا کہنا تھا کہ جب تک یہ ناجائز حکومت قائم رہے گی ملک تنزلی کی جانب جائے گا اس لیے پوری قوم سے مطالبہ کرتا ہوں کہ مقامی سطح پر بھرپور ا حتجاج ریکارڈ کرائے۔تاکہ جلد از جلد نا اہلوں سے ملک کا چھٹکارا ہوسکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں