nawaz sharif 8 month

نواز شریف کی طبی بنیادوں پر 8ہفتوں کیلئے سزا معطل

EjazNews

جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشتمل 2 رکنی بینچ نواز شریف کی درخواست ضمانت سے متعلق دائر درخواست پر سماعت کی۔
نواز شریف کی 8ہفتو ں تک طبی بنیادوں پر ضمانت منظور کر لی ہے۔

عدالت میں وزیراعلیٰ پنجاب، ڈاکٹروں کا بورڈ، سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کے ذاتی معالج اور ان کے اور نیب کے وکیل بھی موجود تھے۔ ان سب سے عدالت نے ان کا موقف لیا۔ وکیلوں کی جرح کے بعد کے بعد عدالت اس نتیجے پر پہنچی کہ وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کو 8ہفتوں کیلئے ریلیف دیا جائے۔

وزیراعظم عمران خان کی معاون خصوصی برائے اطلاعات کا نواز شریف کی ضمانت کے بارے میں پریس کانفرنس کے دوران کہنا تھا کہ ہم بیمار کے ساتھ سیاست نہیں کرنا چاہتے ۔ ان کا کہنا تھا جب ان کی صحت اجازت دے دے گی سیاسی کھلاڑی ہیں سیاست میں آئے گے تو ہم بھی موجود ہوں گے۔
ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ عدالت نہیں بولتی اس کے فیصلے بولتے ہیں ۔ یہ تمام بیمارقیدیوں کیلئے ایک راستہ کھلا ہے۔ جب بھی وکلاء عدالت میں جاتے ہیں پچھلے کیسوں کا حوالہ دیتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ میاں نواز شریف کے حق میں ہونے والا فیصلہ ان کمزور لوگوں کے لیے تازہ ہوا کا جھونکا ہے جو مستحق ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم عدالت کی طرف دیکھتے رہیں گے کہ عدالت چھٹی والے دن عدالت لگا کر کتنے لوگوں کو ریلیف دیتی ہے۔
ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم طاقتور لوگوں کے بوجھ سے باہر نہیں آرہے اور انشاء اللہ جلد قانون کی حکمرانی ہوگی ۔ عدالت نے قانون کے تحت فیصلہ کیا ہے باقیوں پر بھی اس کا اطلاق ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں:  جتنی مہنگائی آج ہے ملکی تاریخ میں اتنی پہلے کبھی نہیں ہوئی:میاں شہباز شریف

اپنا تبصرہ بھیجیں