asma jahgir

وہ جو ایک لڑکی تھی چٹان جیسی

EjazNews

عاصمہ جہانگیر کا نام آتے ہی جو ایک جملہ میرے ذہن میں سب سے پہلے آتا ہے وہ ہے جہد مسلسل۔ عاصمہ جہانگیر کی زندگی ہمیشہ سے جہد مسلسل کی طرح گزری ہے۔ وہ خاتون ہونے کے باوجود بڑے بڑے سورماؤں پر بھاری تھی۔ چٹان کی طرح مضبوط ارادوں کی مالک تھیں۔ جن کیسوں کو جلدی کوئی وکیل نہیں لیتا ایسے کیسوں پر انہوں نے محنت کی اور جیت کر بھی دکھائے۔ ہزاروں لوگوں کے بیچ میں سے وہ عاصمہ جہانگیر ہی تھیں جو کیس کی پیشی پر حاضر ہوتی تھیں۔ وہ صرف ایک وکیل نہیں تھی بلکہ پاکستان میں ان جیسی پائی کی غیر سیاسی خاتون آج تک کوئی دوسری پیدا نہیں ہوئی جس نے اپنی فیلڈ میں بتایا ہو کہ میں ہوں عاصمہ جہانگیر۔

گزشتہ دنوں ان کی برسی منائی گئی جس میں مختلف شعبہ ہائی زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کی اور مقررین نے اپنے اپنے خیالات کا اظہار کیا۔

یہ بھی پڑھیں:  ناروے میں قرآن پاک کو جلانے کی ناپاک جسارت کرنے والے کیخلاف احتجاجی مظاہرے
سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے
پیپلز پارٹی کے رہنما قمر الزمان کائرہ اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے
مسلم لیگ کی رہنما مریم اورنگ زیب اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے
مسلم لیگ ن کی رہنما شائستہ پرویز بٹ اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے
پی ٹی آئی کے رہنما ولید اقبال اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے
معروف صحافی سلیم صافی اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے
پیپلز پارٹی کی رہنما نفیسہ شاہ و دیگر سامعین
وکلاء برادری سے تعلق رکھنے والی خواتین

اپنا تبصرہ بھیجیں