l-o-c

ایل او سی پر بھارتی جھوٹ غیر ملکی سفارتکاروں نے آنکھوں سے دیکھا

EjazNews

یہ پہلی بار نہیں ہوا کہ پاکستان انڈیا کے جھوٹے دعوﺅں کو دنیا کے سامنے کھول کر بیان کر رہا ہے ۔ ماضی قدیم میں جانے کی ضرورت نہیں ہے ، کچھ عرصہ قبل انڈین آرمی دعویٰ کر رہی تھی کہ انہوں نے پاکستان کا ایک ایف سولہ طیارہ گرایا ہے جس کو وہ کسی طور پر بھی ثابت کرنے میں ناکام رہی ، ڈھٹائی اور بے شرمی کی انتہا اس قدر ہے کہ شرمندگی محسوس ہی نہ کی جب دنیا نے پاکستان کے پاس موجود طیاروں کی تعداد پوری دیکھی اور پوری دنیا میں بھارتی پروپیگنڈا جھوٹا ثابت ہوا ۔ اور حقیقت میں انڈین طیارہ پاکستان کی سرحد پر جل رہا تھااور پائلٹ پاکستانیوں سے مار کھا رہا تھا۔
اس سے قبل سرجیکل سٹرائیک کا جھوٹا دعویٰ کیا گیا جس پر پوری دنیا میں انڈیا پر جگ ہنسائی ہوئی لیکن بے شرمی کی انتہا یہ ہے کہ اسی طرح کا دعویٰ گزشتہ روز انڈین آرمی چیف نے کیا کہ ہم نے پاکستان میں حملہ کر کے مبینہ تباہی مچائی ہے لیکن حقیقت بالکل اس کے برعکس ہے۔ ایسا واقع کبھی ہوا ہی نہیں گزشتہ روز انڈین آرمی اپنے 9فوجی مروا چکی ہے ۔ اسی حوالے سے غیر ملکی سفارتکاروں اور میڈیا کو لے کر ایل اوسی کا دورئہ کروایا گیا جس کے تحت انڈیا کے جھوٹے دعوے کے بارے میں آنکھوں دیکھا حال سامنے آئے۔
اس موقع پر وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے بھارت کی ہٹ دھرمی پر کہا کہ ہے بھارت کا بیانیہ پٹ رہا ہے، اس کی ساکھ دنیا بھر میں متاثر ہو رہی ہے، بھارتی الزام تراشی پر دنیا کو نوٹس لینا چاہیے۔ بھارت آبی جارحیت کی طرف بڑھ رہا ہے، اس معاملے پر دفتر خارجہ میں اجلاس ہوگا اس کے علاوہ نریندر مودی کی ہریانہ کی تقریر کا بھی مناسب جواب دیں گے۔

یہ بھی پڑھیں:  پیپلز پارٹی نے ہر فورم پر کشمیریوں کی آواز اٹھائی، آج بھی یہ سلسلہ جاری ہے:بلاول بھٹو زرداری

ڈی جی آئی ایس پی آر کے مطابق غیر ملکی سفارتکاروں نے جورا بازار کا دورہ کیا اور وہاں شہریوں اور دکانداروں سے ملاقات کی۔ اس دوران غیر ملکی سفارتکاروں نے بھارتی گولا باری سے دکانوں اور گھروں کو پہنچنے والے نقصانات کا جائزہ بھی لیا۔
ترجمان پاک فوج نے سفراءکو بتایا کہ بھارت نے 2018 میں 3038 بار جنگ بندی معاہدہ کی خلاف ورزی کی جبکہ 2019 میں اب تک بھارت نے 2608 بار جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کر چکا ہے۔ بھارتی فائرنگ سے 2018 میں 58 شہری شہید اور 319 زخمی ہوئے جبکہ 2019 میں اب تک 44 شہری شہید، 230 زخمی ہوگئے ہیں۔
ترجمان دفتر خارجہ نے کا اس بارے میںلکھنا تھا بھارتی آرمی چیف کا دعویٰ صرف دعویٰ ہی رہ گیا ہے۔ بھارت کی جانب سے کوئی بھی ایل او سی کے دورے میں شریک نہیں ہوا اور نہ ہی انہوں نے” مبینہ لانچ پیڈ“کے حوالے سے کوئی تفصیلات فراہم کیں۔
ترجمان پاک فوج میجر جنرل آصف غفور نے بھی لکھا ہے کہ کیا یہ اچھا نہیں ہوتا کہ اس (دورے) میں بھارتی ہائی کمیشن اپنے آرمی چیف کے ساتھ کھڑا نہ ہوتا ؟ بھارتی ہائی کمیشن کا کوئی اہلکار ، سفارتکار ایل او سی جانے کے لیے نہیں پہنچا کیونکہ بھارتی ہائی کمیشن کے سٹاف میں غیر ملکی سفارتکاروں کےساتھ ایل او سی جانےکی اخلاقی جرات نہیں۔
غیر ملکی سفرا اور ہائی کمشنر آزاد کشمیر میں لائن آف کنٹرول (ایل او سی) کا دورہ کرنے کے لیے وادی نیلم پہنچے جہاں سے وہ ایل او سی کے جورا، شاہ کوٹ اور نوسہری سیکٹرز کا دورہ کیا۔
خیال رہے کہ پاک فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے تمام سفارت کاروں کو بھارت کی طرف سے ہفتہ کی شب اور اتوار کو بلا اشتعال بھارتی فائرنگ سے متاثرہ علاقوں کے معائنے کے لیے آج کنٹرول لائن کے دورے کی دعوت دی تھی۔
ترجمان پاک فوج کا کہنا ہے کہ کہا بھارت کے پاس اپنے آرمی چیف کا جھوٹا دعویٰ ثابت کرنے کے لیے کچھ نہیں، غیر ملکی سفارت کاروں اور میڈیا کے دورے سے زمینی حقائق سب کے سامنے آ جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ بھارت کے ناظم الامور کو بھی غیر ملکی سفارتکاروں کے سامنے اپنی فوج کے سربراہ کے دعوے کو ثابت کرنے کی دعوت دی گئی کیونکہ پاکستان جنگ نہیں چاہتا لیکن اگر ہم پر جنگ مسلط کی گئی تو پاکستان27 فروری کی طرح ردعمل ظاہر کرے گا۔

یہ بھی پڑھیں:  سنگا پور کی ایکسپورٹس 330 ارب ڈالر ہیں، ہماری اب جاکے 25 ارب ڈالر ہوئی ہے اور ہم ہیں 22 کروڑ لوگ:وزیراعظم

اپنا تبصرہ بھیجیں