FATFA

فنانشن ایکشن ٹاسک فورس کی پاکستانی اقدامات کی تعریف، مزید اقدامات کیلئے فروری2020ء تک ٹائم دے دیا

EjazNews

ایف اے ٹی ایف کے سربراہ نے پریس کانفرنس کے دوران پاکستان کی جانب سے اٹھائے گئے اقدامات کی تعریف کی۔پیرس میں ایف اے ٹی ایف کے صدر نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ منی لانڈرنگ اور دہشتگردی کے خاتمے کیلئے پاکستان نے مثبت اقدامات کیے ہیں۔ ایف اے ٹی ایف کے صدر نے کہا کہ پاکستان کو گرے لسٹ میں شامل ہونے سے بچنے کے لیے 2020 تک کا ٹائم دیتے ہیں لہٰذا پاکستان کا نام فی الحال گرے لسٹ میں ہی رہے گا۔
انہوں نے پاکستانی اقدامات کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ معاملات مزید بہتر کرنے کیلئے پاکستان کو فروری 2020 تک کا وقت دیا گیا ہے۔

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) نے پاکستان کا نام فی الحال گرے لسٹ میں رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔فرانس کے دارلحکومت پیرس میں 13 اکتوبر سے جاری ایف اے ٹی ایف کا اجلاس ختم ہو گیا ہے۔واضح رہےکہ ایف اے ٹی ایف کے جائزہ اجلاس میں وفاقی وزیر اقتصادی امور حماد اظہر کی قیادت میں پاکستان کا 5 رکنی وفد شریک ہے۔
یاد رہے:فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا قیام جی 7ممالک نے 1989ءمیں کیا ،اس کا بنیادی مقصد بڑھتی ہوئی منی لانڈرنگ پر قابو پانا تھا۔ 2001ءمیں نائن الیون کے بعد منی لانڈرنگ کے ساتھ دہشت گردی کی شقیں بھی شامل کر دی گئیں۔ ابتدائی طور پر اس ٹاسک فورس کی تشکیل نے جی 7ممالک ممالک میں کلیدی کردار ادا کیا،اس کی بنیادی پالیسیاں منی لانڈرنگ سے جی 7کی پالیسیاں ہی ہیں۔ بعد ازاں اس میں انسداد دہشت گردی کا مینڈیٹ بھی شامل ہوگیا۔ اس کا صدر مقام پیرس میں ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  سری لنکن قومی ٹیم کے کھلاڑی کار حادثے کے بعد گرفتار

اپنا تبصرہ بھیجیں