Imran khan speech

100ارب کے قرضوں میں سے25ارب خواتین کو ملیں گے:وزیراعظم

EjazNews

وزیراعظم عمران خان نے کامیاب جوان پروگرام کا افتتاح کرنے کے بعد حاضرین سے خطاب کیا جس میں ان کا کہنا تھا کہ ‘کامیاب نوجوان پروگرام کے تحت 10 لاکھ نوجوانوں کو میرٹ پر قرض دیں گے اور 100 ارب روپے کے قرضوں میں سے 25 ارب خواتین کے لیے ہوں گے اور ایک لاکھ روپے کے قرض پر کوئی سود نہیں ہوگا۔انہوں نے کہا کہ ‘یہ قرضے میرٹ پر دئیے جائیں گے اور کوئی سفارش نہیں چلے گی، اس پورے پروگرام کی میں خود نگرانی کروں گا۔ان کا کہنا تھا کہ حکومت سیاسی امتیاز سے بالاتر ہو کر قرضے دے گی اور اگر میرٹ پر فیصلے ہوئے تو فضل الرحمٰن کے لوگوں کو بھی قرضے ملیں گے۔
انہوں نے کہا کہ نوجوانوں کو ہنرمند بنانے کے لیے 10 ارب روپے خرچ کریں گے اور ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ مدرسے کے بچوں کو بھی اپنا سمجھیں گے جو اس سے پہلے کبھی نہیں ہوتا تھا۔ ملک میں تعلیم کا ایک ہی سسٹم متعارف کرائیں گے۔ نئے پاکستان میں غیر مسلم برابر کے شہری ہوں گے، اقلیتوں کو برابر کے حقوق دیے جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ ‘مشکل وقت سبق سکھاتا ہے اور جو سبق آپ کو برا وقت سکھاتا ہے وہ آپ کی جیت آپ کو نہیں سکھا سکتی۔تقریب کے دوران وزیراعظم عمران خان نے انٹرن شپ پروگرام شروع کرنے کا بھی اعلان کیا۔

یہ بھی پڑھیں:  زندگی میں ہر اختتام کی نئی شروعات ہوتی ہے
وزیراعظم عمران خان تقریب سے پہلے سابق وزیر خزانہ اسد عمر سے گفتگو کرتے ہوئے۔ تصویر پی ٹی آئی آفیشل

انہوں نے کہا کہ سب سے اہم چیز میرٹ ہے اور اسی پر ہی اس کی بنیاد رکھی گئی ہے کیونکہ دنیا میں وہ قومیں آگے بڑتھی ہیں جن میں میرٹ کا سسٹم بہتر ہوتا ہے۔ مسلمان ہزار سال تک دنیا کے سپرپاور تھے لیکن وہ جمہوری کلچر سے بادشاہت کی جانب چلے گئے اور بادشاہت میں میرٹ نہیں ہوتا، ہم چاہتے ہیں کہ میرٹ سب سے پہلے ہو اور میرٹ ہی جمہوری نظام کا خاصہ ہے۔ ملکی حالات خراب ہونے کی سب سے بڑی وجہ سفارش اور کرپشن ہے، ملک تب ترقی کرے گا جب سفارش اور کرپشن نہیں ہوگی۔ان کا کہنا تھا ‘وہ انسان اوپر جاتا ہے جس کی سوچ بڑی ہوتی ہے، ماضی میں میرٹ کو نظر انداز کرنے کی وجہ سے مسائل نے جنم لیا، ہم ملک میں میرٹ کا نظام لارہے ہیں اورکرپشن پر قابو پارہے ہیں۔ ‘ترقی کے لیے ہمیں مثبت سوچ کےساتھ اہداف بڑے رکھنے ہوں گے، تحریک انصاف کی حکومت میرٹ اور شفافیت پر یقین رکھتی ہے۔
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ‘دنیا انسانوں کی مدد کرنے والوں کو ہمیشہ یاد رکھتی ہے۔ایک بٹن دبانے سے تبدیلی نہیں آتی، حکومت اور قوم کی کوشش سے نیا پاکستان بنے گا۔
انہوں نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حقیقی تبدیلی کے لیے پہلے سوچ میں تبدیلی لانا ضروری ہے، عظیم قوم بننے کے لیے ہمیں خود کو بھی بدلنا ہوگا۔ ‘خوددار قوم اپنے پاؤں پر کھڑی ہوتی ہے، بھیک مانگ کر قوم نہیں بنتی مگر یہاں جب ہم تاجروں کے پاس جاتے ہیں تو کہتے ہیں ہم نے ٹیکس نہیں دینا، ہمیں خود دار قوم بننے کے لیے ٹیکس دینا پڑے گا۔ سگریٹ بنانے والی ملک کی 2 کمپنیاں 98 فیصد جبکہ دیگر کمپنیاں صرف 2 فیصد ٹیکس دیتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:  علیم خان کے جوڈیشل ریمانڈ میں20اپریل تک توسیع

اپنا تبصرہ بھیجیں