india

مقبوضہ کشمیر میں عید کی نماز پر بھارت کی جانب سے پابندی عائد

EjazNews

بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں نمازعید کی ادائیگی پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ ظلم کی انتہا دیکھیں کہ مسلمانوں کو ان کے مقدس فریضوں کی ادائیگی سے بھی روکا جارہاہے۔ ایسی پابندیاں عائد کی جارہی ہیں جس کے بعد ان کا کوئی پرسان حال نہیں ہے۔ پاکستان اپنی جگہ پر آواز اٹھا رہا ہے لیکن کیا مظلوموں کی مدد کرنا دنیا کا فرض نہیں بنتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  وہ 4خوبیاں جن میں پاکستان بھارت سے آگے ہے

اقوام متحدہ ہر مسئلہ کے لیے حاضر رہتا ہے سوائے مسلمانوں کے مسائل حل کرنے کے ۔ اقوام متحدہ پر اب بہت سے سوالیہ نشان اٹھنے شروع ہو چکے ہیں کہ آیا یہ ادارہ جس مقصد کے لیے بنایا گیا تھا یہ وہ کام کر بھی رہا ہے یا پھر یہ بڑے اور اہم ممالک کے ایجنڈے پر کار بند ہے۔ کیونکہ کشمیریوں کا شایدہی کوئی گھر ایسا ہو گا جس نے قربانی نہ دی ہو لیکن اس کے باوجود دنیا کی پر اسرار خاموشی حیرت انگیز ہے۔
ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی کا کہنا تھابھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں عید الاضحی پر نماز کی پابندی، عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے، اقوام متحدہ اس بات کا نوٹس لے۔ترجمان نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بھارت بحیرہ ہند کو جوہری ہتھیاروں سے لیس کررہا ہے، بھارتی اقدامات اقلیتوں کیلئے خطرناک ہیں اور بی جے پی کی ہندو توا ایجنڈے کی حکومت خطے کے امن کیلئے خطرہ ہے۔بھارت کی جانب سے رافیل طیاروں کی خریداری کی خبریں دیکھی ہیں، یہ طیارے جدید سسٹم سے لیس ہیں، بھارت جنوبی ایشیا میں ہتھیاروں کی دوڑ میں شامل ہے اور دنیا میں ہتھیاروں کا سب سے بڑا امپورٹر بن گیا ہے، پاکستان اس تمام تر صورتحال سے آگاہ ہے اور ہر قسم کی جارحیت سے نمٹنے کے لئے ہمہ وقت تیار ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  مسجد الحرام میں بال کاٹنے والوں کی پکڑ دھکڑ کیوں ہو رہی ہے؟

عائشہ فاروقی نے کہا کہ افغان طالبان کے سیز فائر کے اعلان کا خیرمقدم کرتے ہیں، قطر کے دارالحکومت دوحہ میں طالبان کے ساتھ مذاکرات ہورہے ہیں، افغانستان میں دونوں اطراف کو قیدیوں کے تبادلے سمیت اپنے وعدوں کی پاسداری کرنی چاہیے۔