ہمایوں سعید اور عدنان صدیقی کا کرونا ٹیسٹ اور مداحوں کی دلچسپ باتیں

humayn_saeed

اداکار ہمایوں سعید اور عدنان صدیقی پچھلے دنوں امریکہ میں تھے جہاں سے انہوں نے مداحوں کیلئے اپنی مختلف تصاویر بھی شیئر کی تھیں۔ وطن واپسی پر دونوں اداکاروں نے خود کو ایک ہوٹل میں خود ساختہ تنہائی جس کو قرنطینہ کہا جاتا ہے میں رکھا ہے۔ دونوں اداکاروں نے اپنے ٹیسٹ بھی کروائے ہیں۔ ہمایوں سعید نے اپنے سوشل اکاﺅنٹ پر لکھا ہے کہ میں نے اور عدنان صدیقی نے خود کو ایک ہوٹل میں قرنطینہ کیا ہوا ہے اور ہم نے اپنے ٹیسٹ بھی کروائے ہیں ۔ اور دعا کی اپیل کی ہے کہ ان کے ٹیسٹ ٹھیک ہوں۔
یہ ایک اچھی روایت ہے۔ کیونکہ جو لوگ بھی عالمی سفر سے پاکستان واپس آئے ہیں وہ اگر خود کو کچھ دنوں کیلئے قرنطینہ کر لیں تو وہ نہ صرف اپنے آپ کو بلکہ اپنے معاشرے کوبھی اس وائرس کی وبا سے بچا سکتے ہیں۔ یہ وائرس اس لیے خطرناک ہے یہ انسانوں سے انسانوں کولگتا ہے۔
اقرار الحسن نے لکھا ہے کہ اللہ پاک آپ کو اپنی امان میں رکھے۔
روشنی ملہوترا لکھتی ہیں کہ ہمایوں سعید پریشان نہ ہوں ، اچھے لوگوں کویہ گندی بیماری نہیں لگتی ، آپ کی رپورٹس نیگٹو ہی ہوں گی۔
عمارہ کاظم کہتی ہیں او بھائی اگر سپٹم ہی نہیں ہیں تو پھر ٹیسٹ کیوں کروایا۔
عباسی حسن ابھی تک ڈرامے کو نہیں بھولے لکھتا ہیں اب دانش نے شہوار کو اپنے ساتھ رکھ کر بدلہ لیا ہے۔
آمنہ کہتی ہیں ہمایوں سمپٹم کا انتظام کرو اس کے بعد ٹیسٹ کروانا14دن سپٹم کو دیکھ لو۔

https://twitter.com/iamhumayunsaeed/status/1241307160249860097?s=20

غرض مداحوں کے جوابوں کی ایک لمبی لسٹ ہے جس میں ہمایوں سعید اور عدنان صدیقی سے محبت کا اظہار بھی ہے۔ میرے پاس تم ہو کو لے کر شہوار کی درگت بھی بنائی جارہی ہے اور ہمایوں سعید پر چٹخلے بھی چھوڑے جارہے ہیں ۔
لیکن کوئی کچھ کہے آپ کو ماننا ہوگا کہ دونوں نے ایک اچھے شہری ہونے کا ثبوت دیا ہے اور وہ کام کیا ہے جو انہیں کرناچاہیے تھا وہ عالمی سفر سے واپس لوٹے تھے اور اس سفر کے دوران ان سے ہر رنگ اور نسل کے لوگ ملے ہیں ۔ اگر وہ یہ قرنطینہ نہ کرتے اور خدانخواستہ ان میں یہ وائرس ہوتا تو سوچئے کہ یہ دونوں روز کتنے لوگوں سے ملتے ہوں گے اور یہ وائرس انسانوں سے انسانوں کو لگتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں