گھر میں بیکنگ کیلئے ہمارے چند مشورے

home-beaking

سب سے پہلے بیکنگ کے دو بنیادی گر بتادوں جن پر عمل کرنے سے عمدہ بیکنگ کی جاسکتی ہے ۔ یہ ”گر“ ویسے تو کتابوں میں لکھے ہوئے مل جائیں گے مگر میں ان میں اپنے تجربے کو بھی شامل کروں گی جو میں نے برسوں میں حاصل کیا۔ سب سے پہلے دو بنیادی اشیاءہیں جو اگرآپ کے کچن میں ہوں تو بیکنگ کا کام آسانی سے ہوسکتا ہے۔
بجلی سے چلنے والا مکسر:
اس سے وقت ، محنت اور توانائی کی بچت ہوجاتی ہے گو ہاتھ سے چلانے والے مکسر بازار میں مل جاتے ہیں یہ بھی نہ ہوں تو عام کانٹے سے بھی کام چل جاتا ہے مگر ان سب میں وہ سہولت نہیں ہوتی جو بجلی سے چلنے والے مکسر میں ہے۔
چاپر یا فوڈ پروسیسر:
جدید کچن کی اہم ضرورت ہے اس میں ہر قسم کی چیز پیسنے کے علاہ ڈبل روٹی ، بسکٹ اور کیک تک کا مواد بنایا جاسکتا ہے۔
مختلف سائز کے سانچے اور ٹرے:
کیک کے لئے آٹھ انچ کا گول یا چوکور سانچہ سب سے زیادہ استعمال ہوتا ہے، اس کے علاوہ مختلف سائز کے سانچے اور ٹرے بھی بسکٹ بنانے کیلئے درکار ہو ں گے۔
پیمائشی کپ اور چمچ:
بازار میں پلاسٹک اور شیشے کے پیمائشی کپ عام مل جاتے ہیں ۔ بیکنگ میں ان کی اہم ضرورت ہوتی ہے تاکہ میدہ، چینی وغیرہ کی پیمائش درست طریقے سے کی جاسکے۔ چمچ بھی چار چار کے سیٹ میں عام مل جاتے ہیں ان میں ٹیبل ا سپون، ٹی اسپون ، آدھی اورچوتھائی ٹی اسپون ہوتی ہے۔
کچن سکیل:
یہ تولنے کی مشین ہوتی ہے اس پر پونڈ، کلو اور کلو گرامز میں وزن تحریر ہوتا ہے کسی بھی چیز کا وزن کرنا ہو توآسانی رہتی ہے یہ مختلف اشکال میں بازار میں مل جاتی ہے۔
جار یا ڈبے:
پلاسٹک کے جار یا ڈبے میدہ، چینی، براﺅن شوگر، میوہ جات وغیرہ رکھنے کے کام آتے ہیں۔
بسکٹ وڈ ونٹ کٹر:
یہ بھی مختلف اشکال میں سانچوں کی دکان سے مل جاتے ہیں۔ البتہ ڈونٹ کٹر ایک ہی شکل کا ہوتا ہے۔ یہ نہ ہو تو دو ڈھکنوں کی مدد سے بھی کام چل جاتا ہے۔ پہلے بڑے چھکن سے روٹی کو کاٹ کر درمیان سے چھوٹے ڈھکن سے کاٹ کر سوراخ بنالیں۔ ڈونٹ بن جائے گا۔ اسے ڈیپ فرائی کرتے ہیں۔
چھلنی اور بیلن و تختہ وغیرہ:
میدے کو ہمیشہ چھان کر ڈالیں، بیلن بھی پائی وڈونٹ وغیرہ بیلنے کے کام آتا ہے اور تختے پر آپ ان چیزوں کو رکھ کر بیل سکتی ہیں۔ ویسے کچن کی میز کی سطح بھی اس کام کے لئے استعمال ہو سکتی ہے۔
کیک، بسکٹ اور دیگر بہت سی بیکنگ کی چیزیں بنانے کیلئے جن چیزوں کی ضرورت ہوتی ہے ان میں میدہ، انڈے، بیکنگ پاﺅڈر، کارن فلور، چینی ، مکھن یا مارجن کی ضرورت ہوتی ہے۔
میدہ:
میدہ ہلکا اور خشک ہو نا چاہیے۔ بھاری اور سیلا میدہ ہونے کی صورت میں کیک کم پھولے گا اور اتنا عمدہ بھی نہیں ہوگا۔
میدے کو ہمیشہ دوبار چھانیں۔
برسات کے موسم میں میدے کو فریج میں رکھیں تاکہ سرسری نہ پڑے۔
جس ترکیب میں بیکنگ پاﺅڈر یا کوکو پاﺅڈر شامل ہو اسے میدے کیساتھ ہی ملا کرچھان لیں تاکہ اچھی طرح مل جائے
بعض تراکیب میں Self Raising Flourلکھا ہوتا ہے۔ ہمارے ہاں میدے کی ہر قسم نہیں ملتی اگر بڑے شہروں میں ملے بھی توچونکہ غیر ملکی ہوتا ہے۔ لہٰذا قیمت خاصی زیادہ ہوتی ہے۔
ایک کپ سادہ میدے میں دو چائے کے چمچ بیکنگ پاﺅڈر ملا لیا جائے تو Self Raisingفلور بن جاتا ہے۔
اسفنج (Sponge) کیک میں میدے کو ہمیشہ تھوڑا تھوڑا کر کے بہت ہلکے ہاتھ سے لکڑی کے چمچے ملانا چاہئے۔ دوسری صورت میں کیک پھولے گا نہیں اور ہلکا بھی نہیں بنے گا۔
ماربل کیک بنانے کیلئے آدھے مرکب میں جب کوکو پاﺅڈر ملائیں تو تھوڑا سا دودھ یا پانی بھی ملا لیں ورنہ کیک کا یہ حصہ خشک سارہے گا۔
انڈے:
بہت سی ڈشز ایسی بھی ہیں جن کی ظاہری خوبصورتی کاد ارومدار کافی حد تک انڈوں پر ہوتا ہے۔
انڈے تازہ، بغیر کریک شدہ اور بڑے سائز کے ہونے چاہئے اور ان کو بیکنگ شروع کرنے سے قبل فریج میں نکال کر رکھ لیں۔
روم ٹمپریچر پر رکھے گئے انڈوں میں زردی و سفیدی الگ کرنے میں آسانی رہتی ہے اورسفیدی بھی زیادہ مقدار میں نکلتی ہے۔
انڈوں کی سفیدی کو پھینٹ کر جھاگ بنانا ہو تو برتن بالکل خشک ہونا چاہئے۔ چینی ملانے سے قبل سفیدیوں کی جھاگ اچھی طرح بنی ہو ورنہ چینی ملانے سے سخت نہیں ہوگی۔ سفیدی میں زردی کی آمیزش بالکل نہ ہو۔ بجلی کے مکسر سے بہت جلد جھاگ تیار ہونے کے بعد فوراً ہی اوون میں پکنے کے لئے رکھ دیں ورنہ بیٹھنے لگتی ہے۔ (اوون پہلے سے گرم ہونا چاہئے)۔
باقی چیزوں میں بیکنگ پاﺅڈر کی کوالٹی عمدہ ہونا چاہئے۔ زیادہ بڑا ڈبہ خریدنے کی بجائے چھوٹا ڈبہ خریدنا چاہئے تاکہ ختم ہونے پر تازہ خرید سکیں۔
بڑا ڈبہ زیادہ عرصہ پڑا رہے تو بیکنگ پاﺅڈر کی کوالٹی متاثر ہونے لگتی ہے۔ بیکنگ پاﺅڈر کو ہوا بند ڈبے میں رکھیں تاکہ ہوا نہ لگنے پائے۔
چینی اگر زیادہ موٹی ہو تو اسے پیس کر کیک، بسکٹ وغیرہ میں ڈالیں۔ مکھن یا ماجرین کو نرم کر کے یا قدرے پگھلا کر پھر پیمائش کریں ۔ سانچو ں کو پہلے چکنائی لگا کر تیار کرلیں۔ اوون کوگرم ہونے کے لئے مطلوبہ نمبر پر سیٹ کر دیں اور اب بیکنگ کی تیاری شروع کریں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں