کمپیوٹر کی مدد سے انسان اپنے آپ کو سمجھ پائے گا؟

Robot_technology
EjazNews

انسانی ذہانت انتہائی محدود ہے۔ قدم قدم پر اسے اپنی کمی کا احساس ہوتاہے۔ مختلف چیزوں کی بھول جاتے اور کبھی یادداشت کمزور دکھائی دیتی ہے۔ بہت سی باتیں ذہن سے ماﺅف ہوجاتی ہیں ۔ کبھی یہ کام بھول گیا کبھی یہ بھول گیا۔مصنوعی ذہانت اس کی سب سے بڑی ضرورت بن گیا۔ عصر حاضر میں سائنس دان مصنوعی ذہانت پر جتنی محنت کررہے ہیںاس سے پہلے کبھی اس پر اتنی محنت نہیں ہوئی۔
انسانی دماغ پیچیدگیوں میں اپنے جسم میں سب سے برتر اور اعلیٰ چیز ہے۔ اور یہ اب تک دنیا کائنات میں جو کچھ دریافت ہوا ہے اس کی ایک حد ہے۔ دماغ میں اربوں کھربوں اقسا م کے دیگر خلیوں سے جڑے ہوئے ہیں ،ان کوسمجھنا انتہائی مشکل بلکہ شاید ناممکن ہے۔ان کا میکنزم تک پہنچنے کے لیے انسان کو ابھی بہت کچھ سیکھنا پڑے گا۔ سائنسدانوں نے انسانی دماغ پر بہت محنت کی ہے اور نئے نئے افق تلاش کیے ہیں۔ لیکن ہر افق کی تلاش کے بعد مزید نئے افق سامنے آجاتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ اسے دماغ کو سمجھنے کے لیے مصنوعی ذہانت کی ضرورت ہے۔ اس کے بغیر وہ اپنے دماغ کو شاید نہ سمجھ سکے۔ اب مستقبل میں کمپیوٹر ہی انسان کو بتائیں گے کہ اس کا ذہن کیا ہے ان کمپیوٹر کی مدد سے انسان اپنے آپ کو سمجھ پائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں