کسی مسلمان کو کافر و فاسق کہنے کا گناہ

Islam

بلا ضرور ت کسی مسلمان کو کافر اور فاسق کہنا جائز نہیں ہے۔ یہ بھی ایک قسم کاجھوٹ ہے اگر وہ اس کا اہل نہیں ۔
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص اپنے مسلمان بھائی کو کافر کہے تو دونوں میں سے ایک ضرور کافر ہو جاتا ہے۔(بخاری ، کتاب الادب باب من اکفرا خاہ بغیر )
اور اس کافر کہنے کا اتنا گناہ ہے جتنا اس کے قتل کرنے کا گنا ہے۔
آپ نے فرمایا: جب کوئی آدمی اپنے مسلمان بھائی کو اے کافر کہہ کر پکارتا ہے تو اس کا گناہ اس کے قتل کے برابر ہے۔ (بزار)
اور خود کہنے والا کافر بھی ہو جاتا ہے۔ جیسے کہ آپ نے فرمایا:کوئی شخص کسی شخص کو نہ فسق کی تہمت لگائے اور نہ کفر کی۔ اس لیے کہ (تہمت کرنے سے)کلمہ فسق و کفر پھر آتا ہے تہمت کنندہ پر اگر وہ اس کے لائق نہیں۔ (بخاری ، کتاب الادب باب ماینہی عن السباب واللعن)

اپنا تبصرہ بھیجیں