ماسک لگانے کی مدت

facial mask_1
EjazNews

آپ کو ماسک کتنی دیر تک لگائے رکھنا چاہئے اور اسے کس طرح دھو کر اتارنا چاہئے؟ آئیڈیل تو یہ ہوتا ہے کہ ماسک کم از کم ایک گھنٹے تک لگا رہے اس کے بعد اضافی مقدار کو صاف سوتی پھریری سے رگڑ کر صاف کرلیں اور چہرے کو اچھی طرح سے گرم پانی سے دھو لیں۔ آخر میں ٹھنڈے پانی کے چھینٹے مارلیں ۔ پھر تھپک کر خشک کر لیں۔
آپ اپنے چہرے کو ماسک لگانے کے لئے کس طرح تیار کریں؟:
اس بات کا اطمینان کرلیں کہ آپ کا چہرہ صاف ستھرا ہے اور اس پر میک اپ کی کوئی کثافت لگی ہوئی باقی نہیں ہے۔ اگر آ پ کی جلد خشک ہے تو آپ ایک ایسا کپڑا استعمال کر سکتی ہیں جو کہ گرم پانی میں ڈبویا گیا ہو اور اسے نچوڑ نے کے بعد اس سے حلیمی سے اپنا چہرہ صاف کرلیں اس عمل سے مسامات کھل جائیں گے اور ماسک کی تاثیر کو اچھی طرح سے جذب ہونے کا موقع مل جائے گا۔ یہ علاج خاص طور پر خشک جلد کو فا ئدہ پہنچاتا ہے۔
اگر آپ کی جلدچکنی ہے تو اس طریقے کو استعمال نہ کریں کیونکہ اس سے مہاسے اور پھنسیاں نکل سکتی ہیں۔
فیشل کرنے سے پہلے اپنے بالوں کو مضبوطی سے پیچھے باندھ لیں۔ بالوں کی اڑتی ہوئی لٹوں کو سنبھالنے کے لئے بےبی پن استعمال کریں۔ اگر آپ چاہیں تو اپنے بالوں کے گرد ایک اسکارف باندھ لیں اور ایک بالا پوش یا ایپرن پہن لیں۔
ماسک کو صاف ستھری انگلیوں یا کفچے سے لگائیں۔ اسے آنکھوں کے گرد یعنی آنکھوں کے اطراف کے حصے پر لگانے سے گریز کریں۔ پیسٹ کو اپنے بالوں سے بھی چھونے نہ دیں اور پیشانی پر سے جہاں بال شروع ہوتے ہیں وہاں پر بھی باریک سی گنجائش کا حصہ خالی رکھیں۔ ماسک کی چہرے پر بے تکے پن سے مالش نہ کریں۔ پیسٹ کو صحیح طریقے سے اور یکساں مقدار میں لگائیں۔
فیشل ماسک بنانے اور اسے استعمال کرنے سے قبل آپ لازمی طور پر پہلے اپنی جلد کی ساخت کا تخمینہ لگائیں۔ کیا آپ کی جلد خشک ہے، چکنی ہے یا ان دونوں کا کمبی نیشن نارمل ہے؟ کیا اس پر مہاسے اور پھنسیاں ہیں۔ بلیک اور وائٹ ہیڈز، پمپلز ، دنبل اور داغ دھبے ہیں؟۔
ایسے فیشل ماسک کا انتخاب کریں جو آپ کے چہرے کو سکون پہنچائے ، رنگ روپ کو تقویت پہنچائےاور اسے نکھار دے۔ ماسک کسی طور پر بھی آپ کی جلد کے کسی مسئلہ کو برانگیختہ کرے اور نہ ہی بدتر بنا دے۔
جو سادہ ترین فیشل ماسک ہماری دادی نانی کے بچپن کے وقت سے استعمال ہو رہا ہے وہ دودھ کی بالائی اور تازہ پسی ہوئی ہلدی کا مکسچر ہے۔
دودھ کی موٹی بالائی کے ہر کھانے کے چمچے میں ہلدی کی ہلکی سی چٹکی ملا دیں۔ اسے اپنے چہرے اور بازوئوں پر لگائیں اور دو گھنٹے اسی طرح لگا رہنے دیں۔ گرم پانی اور صابن سے نہالیں یا اس طرح دھو کر اتار لیں کہ بالائی کا کوئی بچا کچھا حصہ (تلچھٹ) باقی نہ رہے۔ اس سے آپ کی جلد تابناک ہو جائے گی اور چمکنے دمکنے لگے گی۔
تازگی سے بھرپور فیشل کے لئے آپ بالائی میں آدھا چا ئے کا چمچہ عرق گلاب بھی شامل کر سکتی ہیں۔
مٹی کے ماسک مسامات کو ٹائٹ کرنے اور جلد کو پلک جھپکتے میں تازگی عطا کرنے میں فائدہ مند ہوتے ہیں۔ اس کے لئے ملتانی مٹی بے حد مقبول ہے اور فیشل کی مٹیوں میں سب سےزیادہ موئسچرائزنگ ہے۔ اس میں معدنیات بھی بھرپور ہوتی ہیں۔
ملتانی مٹی کا پیسٹ بنا لیں اور اس میں تھوڑی سی کریم ملا دیں اور پھر اسے آہستہ آہستہ چہرے پر مل لیں۔ اسے ایک گھنٹے تک خشک ہونے دیں۔ پھر ٹھنڈے پانی سے دھو کر اسے اتار لیں اورپھر دیکھیںکہ آپ کا چہرہ کتنا صاف اور تازگی سے بھرپور نظر آتا ہے۔
انڈے کی زردی میں وٹامن اے کی وافر مقدار پائی جاتی ہے اور یہ خشک جلد والے چہرے کے لئے نہایت شاندار ہے ۔ ایک چائے کے چمچے انڈے کی زردی کو ایک چائے کے چمچے شہدمیں ملا لیں۔اس میں چند قطرے زیتون کا تیل یا وٹامن ای آئل ملا دیں۔ اچھی طرح مکس کر لیں اور چہرے پر انگلیوں یا چوڑے برش کی مدد سے پھیلا دیں۔ اسے کم از کم ایک گھنٹہ خشک رہنے دیں اور پھر پانی سے منہ دھو کر خشک کرلیں۔ آپ کے چہرے پر ایک نئی تابناکی اور تمتماہٹ آجائے گی۔
خشک جلد کے لئے ایک اور ماسک کی ترکیب یہ ہے۔ جئی کے پسے ہوئے آٹے اور شہد کو مکس کرلیں۔ حتیٰ کہ خالص شہد، ترش کریم یا زیتون کے تیل کی چہرے پر مالش کی جائے اور پھر کچھ دیر بعد منہ دھو لیا جائے تو اس سے بھی خشک جلد کو بہت اچھی غذائیت فراہم ہو جاتی ہے۔
پھلوں میں سے جن کا گودا نکال کر آپ خشک فیشل سکن کے لئے لگا سکتے ہیں وہ مگر ناشپاتی ، مالٹا ، انگور اور شفتالو ہیں ۔اگر آپ کی جلد بہت زیادہ خشک ہے تو مالٹا اور کچا لیموں قطعی طور پر استعمال نہ کریں۔
چکنی جلد کے لئے درج ذیل ماسک آزمائیں۔ کھیرے کو کدوکش کرلیں یا کچل لیں اور دہی میں مکس کر کے چہرے پر لگا لیں۔ کم از کم 15منٹ لگا رہنے دیں۔ پھر ٹھنڈے پانی سے منہ دھو لیں۔
آڑو کے گودے اور دہی کا بنا ہوا ماسک بھی چکنی جلد کے لئے بہترین ہوتا ہے۔
کھلے ہوئے مسامات جو عا م طور پر چکنی جلد کا باعث ہوتے ہیں انہیں بھی اس ماسک سے بڑی مدد ملتی ہے جو تازہ کدو کش کئے یا رگڑ کر پسے ہوئے ٹماٹروں سے تیار کیا گیا ہو۔

اپنا تبصرہ بھیجیں