او آئی سی کی مقبوضہ کشمیر میں ڈومیسائل کے قانون کی مخالفت

oic
EjazNews

او آئی سی کی جانب سے جاری اعلامیہ کے مطابق بھارت کا نیا ڈومیسائل قانون او آئی سی اور سلامتی کونسل کی قرار دادوں کی خلاف ورزی ہے ، اقوام متحدہ اور عالمی برادری ڈومیسائل قانون واپس لینے کے لیے بھارت پر دبائو ڈالے۔او آئی سی کے مطابق عالمی برادری مقبوضہ کشمیر پر اقوام متحدہ کی قرار دادوں پر عملدرآمد یقینی بنوائے۔
او آئی سی کے کمیشن کا کہنا تھا اس سے تنازع کو مزید پیچیدہ کیا جارہا ہے جو پہلے ہی کشمیری مسلمانوں کی ہزاروں بے گناہ زندگیاں لے چکا ہے۔

مقبوضہ کشمیر میں نئےبھارتی ڈومیسائل قانون کو پاکستان نے مسترد کر دیا

کمیشن نے اقوام متحدہ اور عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ بھارت پر ان باتوں پر دباؤ ڈالنے کے لیے بھرپور کردار ادا کرے۔
الف) اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور او آئی سی کی قراردادوں کی پاسداری اور کسی انتظامی اور کسی ایسے قانون سازی کے عمل سے باز رہے جو جغرافیائی اور آبادیاتی حیثیت کو تبدیل کرنے کے مترادف ہے۔
ب) کشمیریوں کی تمام بنیادی آزادیاں بحال کریں، اس کے امتیازی قوانین کو ختم کریں۔
ج) کشمیری عوام کو اقوام متحدہ اور او آئی سی کی متعلقہ قراردادوں کے مطابق آزاد اور منصفانہ رائے شماری کے ذریعے اپنے حق خودارادیت کا جائز استعمال کرنے کی اجازت دیں۔

ستم گری کی شکار مظلوم کشمیری خواتین

ڈومیسائل کاقانون جب منظر عام پر آیا تو حکومت پاکستان نے بھی اس پر سخت احتجاج کیا ۔
کشمیر ایک متنازع علاقہ ہے جو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے ذریعے حل ہونا چاہیے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں